کیا صرف کسٹمز ڈیوٹی اور ٹیکسوں کا خاتمہ پاکستان میں شمسی توانائی کے فروغ کیلئے کافی ہے؟

717
who is leading in renewable energy race?

یہ حقیقت اب ڈھکی چھپی نہیں رہی کہ پاکستان میں سولرائزیشن یعنی شمسی توانائی کے منصوبوں کی کامیابی کا امکان بہت زیادہ ہے۔ کیوں اور کیسے؟ آئیے، اس پرنظر ڈالتے ہیں۔

ہمیں معلوم ہے کہ گزشتہ سال ملک کے زرمبادلہ کے ذخائر تیزی سے کم ہوئے، حکومت نے نشاندہی کی کہ توانائی کی پیداوار سے متعلق اخراجات، جن کے لیے پاکستان کو ایندھن درآمد کرنا پڑتا ہے، کافی زیادہ تھے۔ اس لیے اس نے نیشنل سولر انرجی انیشی ایٹو شروع کرنے کا فیصلہ کیا، جس میں وزیراعظم شہبازشریف نے اعلان کیا کہ حکومت 10 ہزار میگاواٹ بجلی پیدا کرنے کے لیے شمسی توانائی کے منصوبے شروع کرے گی۔

9 جون 2023 کو مالی سال 2024 کے بجٹ کا اعلان کرتے ہوئے وفاقی وزیر خزانہ اسحاق ڈار نے سولر پینلز، انورٹرز اور بیٹریوں کے خام مال کی درآمد پر کسٹم ڈیوٹی ختم کرنے کے فیصلے کا انکشاف کیا۔

حکومت نے 50 ہزار ٹیوب ویلوں کو شمسی توانائی میں تبدیل کرنے کے لیے 300 کروڑ روپے بھی مختص کیے ہیں۔ اس اعلان سے سولر انڈسٹری نے مجموعی طور پر ضرور سکھ کا سانس لیا ہوگا کیونکہ یہ مالی سال 23-2022 میں کئی مسائل سے دوچار ہے۔

مسائل اس وقت دوبارہ شروع ہوئے جب پی ٹی آئی کی حکومت نے 2022 کے اوائل میں تمام سولر آلات کی درآمد پر17 فیصد جی ایس ٹی لگانے کا فیصلہ کیا۔ جب کہ پی ڈی ایم کی حکومت نے مئی 2022 میں یہ ٹیکس ہٹا دیا۔ سال کی پہلی ششماہی میں بڑھتی ہوئی لاگت کی وجہ سے سولر سسٹم کی مانگ کم رہی۔

پھر اپریل میں سٹیٹ بینک آف پاکستان نے تمام ایل سیز پر 100 فیصد کیش مارجن پوسٹ کرنے کے لیے شمسی درآمدات کے لیے ایک شرط جاری کی، جس نے اس شعبے میں کام کرنے والے کاروباروں کے کیش فلو پر ایک اور بوجھ ڈالا۔

یہی نہیں پھرایک اور بھی بڑا دھچکا لگا – ملک کی بگڑتی ہوئی معاشی اور زرمبادلہ کے ذخائر کی صورتحال کو دیکھتے ہوئے، حکومت نے 19 مئی 2022 کو “غیر ضروری” اشیاء کی درآمد پر پابندی لگا دی۔

اس کے بعد 5 جولائی 2022 کو جاری کردہ ایک سرکلر میں سٹیٹ بینک نے ان اشیاء کی فہرست کو اپ ڈیٹ کیا جن کے لیے درآمد کنندگان کو ایل سیز کھولنے کے لیے اس کے فارن ایکسچینج آپریشنز ڈیپارٹمنٹ سے پیشگی منظوری کی ضرورت ہوگی۔ اس فہرست میں سولر پینلز، انورٹرز اور بیٹریاں شامل ہیں۔ اس کی وجہ سے پوری صنعت میں سازوسامان کی قلت پیدا ہوگئی اور کمپنیوں کو اپنے آرڈرز کو مکمل کرنے میں چیلنجز کا سامنا کرنا پڑا۔

اس کے باوجود وزیراعظم شہباز شریف نے دسمبر میں 10 ہزار میگاواٹ کے شمسی توانائی کے منصوبے کی منظوری دی۔ منصوبے کے پہلے مرحلے میں سولر پراجیکٹ کے ذریعے پیدا ہونے والی بجلی سرکاری عمارتوں، بجلی یا ڈیزل سے چلنے والے ٹیوب ویلوں اور بجلی کا کم استعمال والے گھرانوں کو فراہم کی جائے گی۔

وزیراعظم کے بیان کے مطابق سرکاری عمارتوں اورڈیزل پر چلنے والے ٹیوب ویلوں کو سولر پر منتقل کیا جائے گا۔ جبکہ  ڈیزل، کوئلہ اور فرنس آئل پر چلنے والے پاور پلانٹس کو جزوی طور پر تبدیل کر دیا جائے گا۔ انہوں نے کہا کہ ہمارے نیشنل سولر انرجی انیشی ایٹو کا مقصد مہنگی توانائی کو سستی شمسی توانائی میں بدل کر لوگوں کو بڑے پیمانے پر ریلیف دینا اور قیمتی زرمبادلہ کی بچت کرنا ہے۔

سٹیٹ بینک آف پاکستان نے بینکوں کو ہدایت کی کہ وہ ضروری اشیاء جیسے خوراک، ادویہ سازی کے خام مال، ادویات، آلات جراحی، تیل، گیس اور کوئلہ، برآمدی صنعت کے لیے خام مال اور سپیئر پارٹس، بیج، کھاد اور کیڑے مار ادویات، اور برآمد ی مال تیار کرنے والے تکمیل کے قریب منصوبوں کے لیے پلانٹ اور مشینری کی درآمد کو ترجیح دیں۔ گویا سولر انڈسٹری کے لیے ایک بار پھر کوئی ریلیف نہیں ملا۔ اوپر سے روپیہ کی کرنسی میں زبردست گراوٹ تھی۔ قدرتی طور پر اس سے نہ صرف شمسی آلات کی درآمد کی لاگت میں اضافہ ہوا، بلکہ شرح مبادلہ کے اتار چڑھاؤ نے کمپنیوں کے لیے مستحکم نرخوں کو برقرار رکھنا بھی مشکل بنا دیا۔

پنٹیرا(Pantera) انرجی کے سی ای او فرقان علی اختر نے کہا کہ سولر انڈسٹری کو مالی سال 23-2022  کا سب سے بڑا مسئلہ سپلائی چین میں خلل تھا جب حکومت کی جانب سے درآمدات کو روکنے کے اقدام کے بعد سولر آلات کو “غیر ضروری” سمجھا جاتا تھا۔ جس سے کمپنیوں کو ایل سی کھولنے میں چیلنجز کا سامنا کرنا پڑا۔ انہوں نے کہا کہ چونکہ شمسی آلات کو درآمد کرنے کی ضرورت ہے، اس لیے کمپنیوں کے پاس بیچنے کے لیے محدود آلات تھے اور سپلائی اور ڈیمانڈ کے فرق کی وجہ سے قیمتیں بڑھ گئیں۔

ریون(Reon) انرجی کے سی ای او مجتبیٰ حیدر خان نے کہا کہ 70 فیصد سولرآلات درآمد کیے جاتے ہیں اس لیے پابندیوں کی وجہ سے ڈیمانڈ پرکافی زیادہ اثر پڑا۔

فیروز پاور کے سیلز مینیجر عماد آصف بھی اس نقطہ نظر سے اتفاق کرتے ہوئے نشاندہی کرتے ہیں کہ درآمدی پابندی کے علاوہ صنعت میں سازوسامان کی کمی کے باعث روپے کی قدر میں کمی نے سولر انڈسٹری کی اقتصادی صحت کو متاثر کیا۔ عالمی مارکیٹ میں سولر سسٹم کی قیمتیں کم ہونے کے باوجود پاکستان میں ڈالر کا ریٹ بہت زیادہ تھا۔ چنانچہ جن صارفین نے کمپنی کے ساتھ قیمتوں کے معاہدے بند کر رکھے تھے، وہ “معمولی ریٹ ایڈجسٹمنٹ” کے ساتھ سسٹمز انسٹال کروانے میں کامیاب ہو گئے۔ عماد آصف نے مزید کہا کہ شمسی صنعت کو متاثر کرنے والا ایک اور عنصر بھی تھا جس کا تعلق سبسڈائزڈ فنانسنگ سے تھا۔

سٹیٹ بینک نے 20 جون 2016 کو قابل تجدید توانائی کے لیے اپنی نظرثانی شدہ فنانسنگ سکیم متعارف کرائی جس کے تحت 6 فیصد تک مارک اپ ریٹ پر تین کیٹیگریز کے تحت سولر سسٹمز کو انسٹال کرنے کے لیے فنانسنگ دستیاب تھی، جس نے اسے سولر پر سوئچ کرنے کا موقع دیا۔ پچھلے سال مرکزی بینک نے سکیم کو 30 جون 2024 تک بڑھا دیا۔ تاہم  عماد آصف کے مطابق حقیقت کچھ اور تھی۔

مجتبیٰ حیدر خان نے یہ بھی کہا کہ مقررہ نرخوں پر گرین فنانسنگ کی عدم دستیابی ایک مسئلہ تھا۔ جب کہ پالیسی فریم ورک موجود تھا، سٹیٹ بینک کی طرف سے کوئی نئی حدیں متعین نہیں کی گئیں۔ لہذا پالیسی وہاں تھی، لیکن پیسے نہیں تھے۔

فرقان علی اختر نے کہا کہ حکومت نے پچھلے دو تین مہینوں میں کچھ “ڈیمیج کنٹرول” کیا ہے اور صورتحال مستحکم ہو گئی ہے۔

جب ان سے پوچھا گیا کہ کیا وہ اگلے مالی سال کے بہتر ہونے کی توقع رکھتے ہیں، پینٹیرا انرجی کے سی ای او نے کہا کہ حال ہی میں متعارف کرایا گیا بجٹ سولر انڈسٹری کے لیے بہت معاون ہے۔

سولر فنانسنگ کا آپشن بھی واپس آ گیا تھا۔ اچھی چیزیں سامنے آ رہی ہیں۔

فیروز پاور سیلز مینیجر عماد آصف نے کہا کہ ماضی میں سولر پینلز کی درآمد پر کسٹم ڈیوٹی نہیں تھی لیکن بجٹ میں بیٹریوں اور انورٹرز پر ڈیوٹی بھی ختم کر دی گئی ہے۔ انہوں نے نوٹ کیا کہ اگرچہ انورٹرز کی قیمت پر اثر پڑے گا، لیکن یہ روپے کی قدر میں کمی سے پورا ہو گا۔ دوسری طرف بیٹریوں کی قیمتوں میں کمی بنیادی طور پر گھریلو صارفین کو متاثر کرے گی کیونکہ صنعتوں نے ہائبرڈ سولر سسٹم کا انتخاب نہیں کیا جس میں بیٹریاں استعمال ہوتی ہیں۔

انہوں نے کہا کہ قیمت پر مجموعی اثر زیادہ نہیں ہوگا۔ سولر پینلز کی قیمتیں جو بہت بڑھ چکی تھیں، ویسے بھی پچاس فیصد کم ہو چکی ہیں۔ لوگ اب دوبارہ سولر سسٹم لگانے پرغور کررہے ہیں، اس لیے توقع ہے کہ انڈسٹری ترقی کرے گی۔ عالمی قیمتوں میں کمی سے مقامی قیمتوں پر کوئی خاص اثر نہیں پڑے گا جب تک کہ روپیہ اپنی کھوئی ہوئی قدر کو دوبارہ حاصل نہ کر لے۔ اس میں کوئی بڑا فرق نہیں آیا ہے۔

عماد آصف کے مطابق، کچھ کمپنیاں ایسی ہیں جو پاکستان میں بیٹریاں اسمبل کرتی ہیں، لیکن قیمت کا بڑا حصہ کمزور روپے کی وجہ سے ہے۔ پھر سوال یہ پیدا ہوتا ہے کہ کیا پاکستان کبھی شمسی آلات کی پیداوار میں خود کفیل ہو پائے گا؟

پینٹیرا انرجی کے سی ای او نے کہا موجودہ ڈیمانڈ ہر سال بڑھ رہی ہے اور آخر کار یہ اس مقام تک پہنچ جائے گی کہ ایک مکمل سولر مینوفیکچرنگ پلانٹ لگانا ممکن ہو گا۔ جب کھپت بڑھے گی تو کمپنیوں کے لیے پاکستان میں پلانٹ لگانا ممکن ہو جائے گا۔ مجھے امید ہے کہ یہ اگلے چند سالوں میں ہو جائے گا۔

عماد آصف نے کہا کہ فیروز پاور طویل مدت میں شمسی توانائی کے آلات تیار کرنے کا ارادہ رکھتی ہے لیکن پاکستان میں صنعت کو درپیش بہت سے چیلنجز کی وجہ سے یہ ممکن ہے بھی اور نہیں بھی ۔ اگر وسائل کا صحیح استعمال کیا جائے تو پاکستان ایک مینوفیکچرنگ ملک بن سکتا ہے اور ظاہر ہے مقامی پیداوار سے قیمتیں بہت کم ہو جائیں گی۔

یہاں یہ بات قابل ذکر ہے کہ وزیراعظم نے ہدایت کی تھی کہ سولر پینلز اور اس سے متعلقہ آلات کی مقامی طور پر تیاری کی پالیسی رواں سال کے شروع میں منظوری کے لیے وفاقی کابینہ میں پیش کی جائے۔ منافع وزیر برائے بجلی خرم دستگیر خان اور قابل تجدید توانائی پر ٹاسک فورس کے کنوینر شاہد خاقان عباسی دونوں تک پہنچا لیکن انہوں نے کوئی جواب نہیں دیا۔

فرقان علی اختر نے کہا کہ عملدرآمد کے حوالے سے اور بھی بہت کچھ کرنا ہے، خاص طور پر جب پاکستان کے دیہی علاقوں کو سولرائز کرنے کی بات آتی ہے۔ انہوں نے کہا کہ حکومت کو مزید سبسڈی کا اعلان کرنا چاہیے اور سولرائزیشن کے لیے پہل کرنی چاہیے۔

مجتبیٰ حیدر خان کا کہنا ہے کہ نئی بجلی کی پیداوار کا ایک بہت بڑا فیصد شمسی توانائی سے ہوگا۔ یہ پہلے ہی کسی بھی پیمانے پر بجلی پیدا کرنے کا سب سے سستا طریقہ ہے۔ جلد ہی ایک وقت آئے گا جب شمسی توانائی بجلی پیدا کرنے کا ترجیحی طریقہ بن جائے گا۔

شمسی آلات کو غیر ضروری قرار دینے اور اس کی درآمد پر پابندی لگانے کے حکومتی فیصلے کا حوالہ دیتے ہوئے انہوں نے کہا کہ شمسی توانائی پر درآمدی پابندیاں عائد کرنا اور ملک میں پہلے سے ہی مہنگی بجلی کی پیداوار کو بڑھانا بے ہودہ فعل ہوگا کیونکہ پاکستان کو نہ صرف ایندھن درآمد کرنا پڑتا ہے بلکہ بجلی کے لیے ایندھن پر انحصار کرتے وقت بھی ٹیکنالوجی کی ضرورت بھی ہوتی ہے۔

شمسی توانائی کی درآمدات کو ‘غیر ضروری’ کی کیٹیگری میں نہیں ڈالنا چاہئے۔ یقینا، ہم یہ نہیں کہہ رہے ہیں کہ انہیں ادویات کے ساتھ رکھیں لیکن ‘ضروری’ اور ‘غیرضروری’ کے درمیان کچھ  فرق روا رکھنا چاہئے۔

انہوں نے کہا کہ حکومت کو اچھی درآمدات کی حوصلہ افزائی اور غیر قانونی تجارت کو روکنے کی بھی ضرورت ہے۔ جبکہ بیٹریوں اور انورٹرز پر سے آئندہ مالی سال میں کسٹم ڈیوٹی ختم کر دی جائے گی، سولر پینلز کو پہلے ہی چھوٹ دی گئی تھی اور غیر رجسٹرڈ کمپنیاں اور افراد شمسی آلات کی آڑ میں غیر معیاری پینل اور یہاں تک کہ ٹوٹے ہوئے شیشے بھی درآمد کر رہے تھے۔

انہوں نے تجویز پیش کی کہ حکومت صرف AEDB کے ساتھ رجسٹرڈ کمپنیوں کو اجازت دے کہ وہ بلومبرگ نیو انرجی فنانس کی فہرست میں شامل سپلائرز سے شمسی آلات درآمد کریں، اور اس بات کو یقینی بنائیں کہ درآمد شدہ سامان کے معیار کی جانچ پڑتال کریں۔

 ریون انرجی کے سی ای او نے مزید کہا کہ حکومت سپیشل اکنامک زونز میں سولر ایکویپمنٹ مینوفیکچررز کیلئے زمین بھی مختص کر سکتی ہے جبکہ مقامی مینوفیکچررز کو رعایتی قرضے بھی دیئے جا سکتے ہیں۔

 انہوں نے پاکستان میں تحقیق اور ترقی کے فقدان کا مقابلہ کرنے پر بھی زور دیتے ہوئے کہا کہ حکومت کو عوامی ملکیت کے ماڈل کے تحت ایک لیب قائم کرنی چاہیے جو شمسی آلات پر جدید ترین ٹیسٹ کر سکے اور تحقیق پر مبنی ایک جدید ادارہ یا یونیورسٹی تعمیر کر سکے جو دنیا کے دیگراعلیٰ ترین اداروں کے ساتھ اشتراک سے کام کرے ۔ ہمیں تحقیق اور ترقی میں سرمایہ کاری کی ضرورت ہے۔

اگر ہم بھارت اور ترکی کو دیکھیں تو انہوں نے مقامی مینوفیکچرنگ شروع کر دی ہے۔ بھارت نے ایککام یہ کیا کہ اس نے ان کمپنیوں کے لیے زیادہ ٹیرف ریٹ کی پیشکش کی جو مقامی طور پر تیار کردہ شمسی آلات کے ذریعے بجلی پیدا کر رہی تھیں۔ اس پر اب درآمدی سولر پینلز پر 40 فیصد کسٹم ڈیوٹی بھی عائد ہوتی ہے۔

 مجتبیٰ حیدر خان نے کہا کہ پاکستان کی صنعت چین کا مقابلہ نہیں کر سکتی، اسی لیے حکومت کو مقامی مینوفیکچرنگ کو ترغیب دینے کے لیے سبسڈی کی پیشکش کرنی چاہیے۔ انہوں نے مزید کہا کہ حکومت کو بیٹریوں پر بھی توجہ دینے کی ضرورت ہے کیونکہ وہ نہ صرف سولر انڈسٹری بلکہ الیکٹرک گاڑیوں کی صنعت کے لیے بھی کارآمد ہیں۔

 دنیا کی جانب سے شمسی توانائی کی قدر اور اس پرمنصوبوں کو منتقل کرنے کی افادیت کو تسلیم کرنے کے بعد آیا حکومت اس صنعت کو سہولت فراہم کرنے کے لیے بامعنی اقدامات کرے گی یا آنے والے سال میں اس کی ترقی کو خطرے میں ڈالے گی؟ اس پر فی الحال حتمی طور پر کچھ کہنا قبل از وقت ہے۔

 

تحریر: عروج عمران 

جواب چھوڑیں

Please enter your comment!
Please enter your name here