ایس ای سی پی کی غیر قانونی قرضہ دینے والی ایپس کیخلاف سخت کارروائی، گوگل کا بھی مکمل تعاون

589

لاہور:عوام کو غیر قانونی قرضہ دینے والی ایپس کے جال میں پھنسنے سے بچانے کے لیے سکیورٹیز اینڈ ایکسچینج کمیشن آف پاکستان ( ایس ای سی پی) نے گوگل، ایپل اور پاکستان ٹیلی کام اتھارٹی (پی ٹی اے) کے ساتھ مل کر 120 ایپس کو بند کروا دیا جو پہلے  گوگل اور ایپل سٹورز پر دستیاب تھیں۔ اس حوالے سے ایس ای سی پی نے ایف آئی اے اور سٹیٹ بینک کے ساتھ بھی اشتراک کیا ہے۔

غیر قانونی پرسنل لون ایپس کا رجحان حال ہی میں منظر عام پر آیا ہے، جنہوں نے ڈیٹا کی رازداری کی خلاف ورزیوں اور زبردستی وصولی کے حوالے سے سنگین خدشات پیدا کیے ہیں۔

ایس ای سی پی نے نہ صرف لائسنس یافتہ نان بینکنگ فنانس کمپنیوں (NBFCs) کے لیے اپنے ریگولیٹری فریم ورک کو سخت کر دیا ہے بلکہ غیر مجاز اور غیر قانونی قرضوں کی ایپس کو بند کرنے کیلئے متعلقہ حکام کے ساتھ موثر اقدامات بھی شروع کیے ہیں۔

موثر نگرانی اور ایس ای سی پی کو موصول ہونے والی شکایات کے ذریعے ریگولیٹر نے 120 غیر قانونی طور پر چلنے والی ذاتی قرض ایپس کی نشاندہی کی اور انہیں فوری طور پر بلاک کرنے کے لیے گوگل، ایپل اور پی ٹی اے کو رپورٹ کیا اور روک تھام کے مطابق الیکٹرانک کرائمز ایکٹ 2016 کے تحت مزید کارروائی کے لیے ایف آئی اے کو بھیج دیا۔

ایس ای سی پی کسی بھی غیر قانونی ایپس کی موجودگی کے لیے باقاعدگی سے گوگل پلے سٹور اور ایپل ایپ سٹور کو چیک کرتا ہے۔ اب گوگل نے پاکستان کی پرسنل لون ایپ پالیسی نافذ کر دی ہے۔

ایس ای سی پی کی کوششوں اور مسلسل مصروفیات کے نتیجے میں گوگل نے پاکستان کی پرسنل لون ایپ پالیسی متعارف کرائی ہے، جس کے مطابق گوگل صرف ایس ای سی پی سے منظور شدہ پرسنل لون ایپس کو اپنے گوگل پلے سٹور پر جگہ دینے کی اجازت دیتا ہے۔

ذاتی قرض لینے والوں کو مشورہ دیا جاتا ہے کہ وہ صرف لائسنس یافتہ نان بینکنگ فنانشنل کمپنیوں سے قرض حاصل کریں۔ منظور شدہ ایپس کے لیے ایس ای سی پی کے ریگولیٹری فریم ورک کے لیے فیس، قرض کی مدت، قسطوں اور چارجز کی شفافیت واضح کرنا ضروری قرار دیا گیا ہے۔

مزید برآں ایس ای سی پی نے لائسنس یافتہ نان بینکنگ فنانشنل کمپنیوں کا معائنہ بھی شروع کر دیا ہے جو ایپس کے ذریعے قرضے فراہم کرتے ہیں تاکہ اس بات کی تصدیق کی جا سکے کہ یہ غلط طور پر قرض فراہمی، ڈیٹا کی خلاف ورزیوں، زبردستی وصولی کے طریقوں وغیرہ میں ملوث تو نہیں۔

جواب چھوڑیں

Please enter your comment!
Please enter your name here