بھارت کی جانب سے برآمد پر پابندی، پاکستانی چاول کی طلب میں اضافہ، ممکنہ خدشات کیا ہیں؟

438

اسلام آباد: چاول کی بین الاقوامی منڈی میں بڑی ہلچل دیکھنے کو مل رہی ہے کیونکہ بھارت غیر باسمتی چاول کی برآمد پر پابندی لگانے پر غور کر رہا ہے۔ یہ غیر یقینی صورتحال پاکستان کے چاول کی مانگ میں اضافے کا باعث بنی ہے اور عالمی خریدار اَب غیر باسمتی چاول کی ضرورت پوری کرنے کیلئے پاکستان کا رُخ کر رہے ہیں۔

2022ء میں ہندوستان نے پوری دنیا کو 2.2 کروڑ ٹن سے زائد چاول برآمد کیا۔ دنیا میں سفید چاول کے واحد سب سے بڑے برآمد کنندہ کے طور پر بھارت عالمی منڈی کے 40 فیصد حصے پر کنٹرول رکھتا ہے اور دنیا کو مختلف اقسام کے چاول برآمد کرتا ہے۔

رواں سال بھارتی حکومت نے خوشبودار اور اعلیٰ قسم کے باسمتی کے علاوہ ہر قسم کے چاول کی برآمد پر پابندی لگا دی ہے۔ یہ پابندی ہندوستان میں چاول کی بڑھتی ہوئی قیمتوں اور ملک میں پیدا ہونے والے اشیائے خوردونوش کے عمومی بحران کی وجہ سے لگائی گئی ہے۔

اس کے نتیجے میں چاول کی بین الاقوامی منڈی اچانک ایک کروڑ ٹن سے زائد چاول کی کمی کا شکار ہو گئی ہے۔ روس اور یوکرائن جنگ کی وجہ سے خوراک کا عالمی بحران پہلے ہی عروج کو پہنچنے والا ہے۔ چاول درآمد کرنے والے ممالک اور بین الاقوامی تنظیموں کو اچانک چاول کی اس بڑی کمی کو پورا کرنے کا چیلنج درپیش ہے۔

بھارت کی جانب سے چاول کی برآمد پر پابندی کی خبریں جیسے ہی سامنے آئیں تو اس کے نتیجے میں امریکا اور دیگر ممالک کی سُپر مارکیٹوں میں ہندوستانی چاول کی خریداری میں تیزی دیکھی گئی۔ یہ خدشہ بھی ظاہر کیا جا رہا ہے کہ چاول کے کچھ دیگر برآمدکنندگان بھی مقامی سطح پر قیمتوں کی مسابقت یقینی بنانے کیلئے بھارت کی پیروی کرتے ہوئے چاول کی برآمد پر پابندی عائد کر دیں۔

چاول کی قیمتیں عالمی منڈی میں گزشتہ 15 سالوں کی بلندیوں کو چھو رہی ہیں۔ تجزیہ کاروں اور تاجروں کا کہنا ہے کہ محدود رسد کی وجہ سے قیمتوں میں مزید اضافے کا خطرہ ہے اور عالمی غذائی افراط زر ایشیا اور افریقہ کے غریب صارفین کو متاثر کرے گا۔ اشیائے خوردونوش کے درآمد کنندگان پہلے سے ہی خراب موسم اور بحیرہ اسود کی ترسیل میں رکاوٹوں کی وجہ سے رسد میں کمی جیسے مسائل سے دوچار ہیں۔

اقوام متحدہ کے ادارہ برائے خوراک و زراعت (ایف اے او) کے مطابق عالمی سطح پر چاول کی قیمتوں میں جولائی میں 2.8 فیصد یا سالانہ 20 فیصد اضافہ ہوا، جو ستمبر 2011ء کے بعد سے ان کی بلند ترین سطح ہے۔ انڈیکا چاول بھارت اور جنوبی ایشیا کے دیگر علاقوں میں اگایا جاتا ہے، عالمی تجارت میں اس کا حصہ تقریباً 70 فیصد ہے۔

اقوام متحدہ کے ادارہ برائے خوراک و زراعت نے متنبہ کیا ہے کہ قیمتوں میں اضافہ عالمی آبادی کے ایک بڑے حصے کے لیے غذائی تحفظ کے خاطر خواہ خدشات پیدا کرے گا، خاص طور پر وہ لوگ جو سب سے زیادہ غریب ہیں اور جو اپنی آمدنی کا بڑا حصہ خوراک کی خریداری کے لیے وقف کرتے ہیں۔

پاکستان کے لیے صورتحال نازک ہے۔ ایک طرف چاول برآمد کرنے اور زرمبادلہ کمانے کا موقع ہے، جس کے لیے چاول کے کاشتکار بہت زیادہ خواہش مند ہوں گے۔ دوسری طرف اس بات کا بھی امکان ہے کہ اگر ہمارا زیادہ چاول برآمد ہو گیا تو مقامی مارکیٹ میں قیمتیں تیزی سے بڑھیں گی جبکہ ملک پہلے ہی تاریخی مہنگائی کا سامنا کر رہا ہے۔

قومی اسمبلی تحلیل ہونے کے ایک دن بعد وزارت خزانہ نے کہا تھا کہ پاکستان کو پانچ بڑے اور مستقل معاشی چیلنجز کا سامنا ہے، بڑھتی ہوئی غربت، سماجی عدم تحفظ، مہنگائی، بالخصوص خوراک کی قیمتوں میں اضافہ، پاکستان کی تاریخ میں سب سے زیادہ ہے۔  پٹرولیم مصنوعات، بجلی اور گیس کی قیمتوں میں اضافہ اور ملکی کرنسی کی مسلسل گراوٹ، یہ سب گھریلو استعمال پر منفی اثر ڈالے گا جس کی وجہ سے غربت میں اضافہ ہو گا، خاص طور پر دیہی علاقوں زیادہ  متاثر ہوں گے۔

چاول کے دوسرے بڑے برآمد کنندگان بھی دلچسپی لے رہے ہیں۔ تھائی لینڈ اور ویتنام نے کہا ہے کہ وہ یقینی بنائیں گے کہ ان کے مقامی صارفین کو بڑھتی برآمدات سے نقصان نہ پہنچے۔ ویتنام کے وزیر صنعت و تجارت نے گزشتہ ہفتے کہا کہ چاول برآمد کرنے والے ملک کے لیے سخت سپلائی اور بڑھتی ہوئی قیمتوں کا سامنا کرنا ناقابل قبول ہے۔”

یہاں یہ یاد رکھنا ضروری ہے کہ پاکستان کے پاس بھارتی مارکیٹ کا کچھ شیئر طویل المدتی نہیں بلکہ صرف اس سال تک کیلئے ہے۔ اگلے سال اگر بھارت کو خوراک کی اسی طرح کی افراط زر کا سامنا نہیں کرنا پڑتا تو وہ دنیا میں چاول کے سب سے بڑے برآمد کنندہ کے طور پر اپنی جگہ لینے لے لے گا۔

رائس ایکسپورٹرز ایسوسی ایشن آف پاکستان (آر ای اے پی) کے سابق نائب صدر توفیق احمد نے اس بات پر زور دیا کہ چاول کی بین الاقوامی مانگ میں یہ اضافہ پاکستان کے لیے اہم منڈیوں پر قبضہ کرنے کا ایک منافع بخش موقع ہے۔ بھارت سے چاول کی سپلائی میں کمی کے امکان کے ساتھ پاکستانی نان باسمتی چاول کی قیمتیں 20 فیصد سے زیادہ یا کم از کم 100 ڈالر فی ٹن تک پہنچ گئی ہیں چونکہ پاکستان کی تازہ فصل کٹائی کے لیے تقریباً تیار ہے، غیر یقینی عالمی صورتحال کے باعث کاشتکاروں نے نئی فصل کی قیمتوں میں اضافہ کرنا شروع کر دیا ہے۔

توفیق احمد نے اس بات پر روشنی ڈالی کہ حکومت اور متعلقہ حکام کی جانب سے صحیح سہولت کے ساتھ پاکستان کی چاول کی برآمد میں ممکنہ طور پر 1 ارب ڈالر کا اضافہ ہو سکتا ہے، جس سے اس شعبے کی کل برآمدی مالیت تقریباً 4 ارب ڈالر تک بڑھ سکتی ہے۔ انہوں نے کہا کہ پچھلے کچھ سالوں میں چاول کی برآمدات 2 سے 2.5 ارب ڈالر تک تھیں۔

تاہم غیر باسمتی چاول کی برآمدات میں اضافے کا ممکنہ منفی پہلو مقامی مارکیٹ میں قیمتوں میں اضافہ ہو سکتا ہے۔ توفیق احمد کا خیال تھا کہ باسمتی چاول کی قیمتوں میں غیر باسمتی چاول کی طرح اضافہ نہیں ہوسکتا ہے کیونکہ ہندوستان بغیر کسی رکاوٹ کے اپنے اعلیٰ معیار کے باسمتی چاول کی برآمدات جاری رکھے ہوئے ہے۔

آر ای اے پی کے ایک اور رکن نے نشاندہی کی کہ سود کی بلند شرح تاجروں اور کاشتکاروں کے لیے بینکنگ لین دین کے ذریعے سودے کرنے کے لیے چیلنجز کھڑی کر رہی ہے۔ انہوں نے حکومت پر زور دیا کہ وہ شرح سود کے منفی اثرات پر غور کرے۔

موجودہ صورتحال جولائی میں غیر باسمتی سفید چاول کی برآمدات پر پابندی لگانے کے بھارت کے فیصلے سے پیدا ہوئی ہے، یہ پابندیاں گھریلو خدشات کی وجہ سے لگائی گئی ہیں، جن میں خوراک کی بڑھتی ہوئی قیمتیں، مہنگائی، اور ایل نینو کی وجہ سے ہونے والی رکاوٹوں کی وجہ سے چاول کی قلت کا خدشہ ہے۔ پابندی کا عالمی سطح پر اثر پڑا ہے، جس کے نتیجے میں چاول کی قیمتوں میں اضافہ ہوا ہے۔

بھارت کا تاریخی طور پر چاول کی عالمی منڈی میں اہم کردار رہا ہے، جس کا 2022 میں چاول کی عالمی تجارت کا تقریباً 40 فیصد حصہ تھا۔ ملک کی برآمدات میں باسمتی چاول، ابلے ہوئے چاول، نان باسمتی سفید چاول، اور ٹوٹے ہوئے چاول شامل تھے۔ ہندوستان سے غیر باسمتی چاول کی برآمدات پر پابندی نے چاول کی عالمی قیمتوں میں15 سے 25 فیصد تک اضافہ کیا ہے، جس سے بنگلہ دیش، نیپال اور افریقی ممالک جیسے ممالک میں کمزور آبادی متاثر ہوئی ہے جو ہندوستانی چاول پر انحصار کرتے ہیں۔

مزید برآں یہ خدشات ہیں کہ چاول برآمد کرنے والے دوسرے بڑے ممالک جیسے تھائی لینڈ، ویتنام اور پاکستان برآمدی پابندیوں کی پیروی کر سکتے ہیں اگر ان کی فصلیں ال نینو سے متاثر ہوتی ہیں۔ چاول کی کمی سے گندم، سویابین، مکئی اور مکئی کی قیمتوں پر اثر پڑ سکتا ہے، جس کے ممکنہ نتائج کھانے کی اشیاء اور ایندھن پر پڑ سکتے ہیں۔

بھارت کی گھریلو چاول کی پیداوار اس کی ضروریات کو پورا کرنے کے لیے کافی ہے، لیکن برآمدات پر پابندی کا مقصد خوراک کی بڑھتی ہوئی قیمتوں کے درمیان ملکی قیمتوں کو مستحکم کرنا ہے۔ بھارتی حکومت کا 25 لاکھ ٹن چاول کو کھلی منڈی میں اتارنے کا فیصلہ ملکی قیمتوں کو سنبھالنے کی اس کی کوششوں کی عکاسی کرتا ہے۔ یہ اقدام آئندہ ریاستی انتخابات اور وسیع تر قومی انتخابات کی روشنی میں انتہائی اہم ہے، جہاں قیمتوں پر کنٹرول ایک سیاسی ترجیح ہے۔

چونکہ ہندوستان کی نان باسمتی چاول کی برآمدات میں توازن برقرار ہے اور یہ بین الاقوامی طلب میں اضافے سے فائدہ اٹھا رہا ہے۔ پھر بھی یہ ساری صورتحال مقامی سطح پر قیمتوں کے استحکام اور بین الاقوامی تجارت کے محتاط انتظام کی متقاضی ہے۔

جواب چھوڑیں

Please enter your comment!
Please enter your name here