امریکہ پر بڑھتا ہوا قرض، کیا یہ واقعی خطرناک ہے؟

889

تقریباََ 33 ٹریلین ڈالر، یہ وہ رقم ہے جو ستمبر 2023 کے اوائل تک امریکہ کا قومی قرض تھا۔ جولائی 2023 کے آخر میں جب قرض تقریباً 300 بلین ڈالر کم تھا، اس میں سے تقریباً 7 ٹریلین ڈالر بین الحکومتی قرضے تھے، یعنی حکومت خود اس رقم کی مقروض ہے۔ ان میں سے 25.7 ٹریلین ڈالر عوامی قرضے تھے۔ 

یہ در اصل  اس بات کا مشاہدہ ہے کہ حکومت نے وسیع تر معیشت میں کتنے ڈالر کا اضافہ کیا ہے اور ٹیکس کے ذریعےکتنے ڈالر اس نے ہم سے جمع کیے ہیں۔ 

ایک اہم سوال یہ ہے کہ کیا واقعی کسی ملک کا  قرض صفر ہونا چاہیے؟

 اس کا جواب ہے، نہیں 

قرض کے بہت سے مفید مقاصد ہوتے ہیں۔ وبائی امراض کے آغاز سے لے کر اب تک امریکہ کے قومی قرض میں تقریباً 90 فیصد اضافہ ہوا ہے۔

لیکن بہت سے ماہرین اقتصادیات اور سیاست دان خبردار کرتے ہیں کہ قومی قرضوں میں مسلسل اضافہ معیشت کے لیے نقصان دہ ہو سکتا ہے۔

ماہرین کا خیال ہے کہ ہمیں سوچنا ہوگا کہ قرض پر سود کی شرح کتنی ہے۔ ہمیں اپنی معیشت میں ترقی کی شرح کے بارے میں سوچنا ہوگا۔ اگر شرح نمو سود کی شرح سے تیز ہے، تو اس سے قرض زیادہ پائیدار ہو جاتا ہے۔

ماہرین کے مطابق امریکی معیشت کے پاس یقینی طور پر وقت کے ساتھ  قرض ادا کرنے  یا اس میں اضافے کو روکنے کے وسائل موجود ہیں۔ لیکن اس کے لیے سیاسی اقدامات کی ضرورت ہے۔

یہاں سوال یہ پیدا ہوتا ہے کہ پھرامریکہ اپنے قومی قرضوں پر قابو کیوں نہیں پا سکتا؟

اور کیا معیشت میں قرض کا کردار بھی ضروری ہے؟

امریکی قرضوں کی اکثریت عوام کے پاس سرکاری سیکیورٹیز کی شکل میں ہے۔  ٹریژری بانڈز، نوٹ اور بل وغیرہ اس کی ایک شکل ہیں۔

جب حکومت رقم ادھار لیتی ہے، تو وہ بانڈ جاری کرتی ہے، جو کہ محض ایک کاغذ کا ٹکڑا ہوتا ہے، جس میں یا تو یہ لکھا ہوتا  کہ میں مستقبل میں آپ کو مخصوص رقم دینے والا ہوں یا آپ اس پر سود کی شکل میں منافع حاصل کر سکتے ہیں۔

امریکی ڈالر دنیا کے لیے ریزرو کرنسی کی نمائندگی کرتا ہے، اس لیے بہت سے لوگ اسے خریدنا چاہتے ہیں۔

عوامی قرض ہمیشہ ہنگامی حالات کے لیے استعمال ہوتا رہا ہے۔

لہذ ا موجودہ عوام پر ٹیکسوں کا بوجھ ڈالنے کے بجائے قرض لے کر مالی اعانت کرنا آسان ہے۔ہم نے عالمی مالیاتی بحران کے بعد 2000 کی دہائی کے آخر میں قرضوں میں ڈرامائی طور پر اضافہ دیکھا۔ کوویڈ کے دوران بھی قرض میں دوبارہ اضافہ دیکھا گیا۔

ماہرین کا کہنا ہے کہ  امریکی طویل مدتی سرمایہ کاری کے لیے قرض نہیں لے رہے۔ بلکہ   فوری طور پر استعمال کے لیے قرض لے رہے ہیں۔

اور کوئی بھی قرض لینے والا، چاہے وہ شخص ہو یا کاروبار یا حکومت، اگر طوی مدتی فوائد کی بجائے فوری استعمال کے لئے قرض لے رہا ہے تو وہ اس کے لئے نقصان دہ ہو سکتا ہے۔

قرض معیشت کو کیسے نقصان پہنچا سکتا ہے۔

یہاں اہم بات یہ ہے جسے قرض سے جی ڈی پی تناسب کہا جاتا ہے۔

امریکہ کی معیشت کے سائز کے برابر اسکا قرض ہے۔

اہک تجزیہ کار کے مطابق “ہم جی ڈی پی کے تقریباً 100 فیصد قرض پرہیں”۔امریکہ کے سائز کی معیشت کو دیکھتے ہوئے، عام طور پر استحکام کی تعداد تقریباً 70فیصد ہوتی ہے۔

اس تناسب کو دیکھنا کیوں ضروری ہے؟

کیونکہ یہ ظاہر کرتا ہے کہ آیا آپ اس قرض کی خدمت کر سکتے ہیں۔ قرض کی خدمت کرنے کا مطلب ہے قرض کی واپسی اور قرض دہندہ کو رقم پر سود ادا کر سکتے ہیں۔

شرح سود کی اہمیت کی وجہ یہ ہے کہ حکومت کو سود ادا کرنا پڑتا ہے۔ اس کا ماضی کا قرض اور جیسے جیسے شرح سود میں اضافہ ہوتا ہے، خالص سود کی ادائیگیوں میں اضافہ ہونا شروع ہو جاتا ہے۔

ڈرامائی طور پر فیڈرل ریزرو مارچ 2022 سے شرح سود میں اضافہ کر رہا ہے۔

اقتصادی سرگرمیوں کو کم کرنے کا مقصد

جب آپ سود کی شرح میں اضافہ کرتے ہیں، تو آپ کو قرض کی خدمت کے لیے زیادہ ادائیگی کرنی پڑتی ہے۔

امریکی حکومت نے 2022 میں قومی قرض پر 475 ارب ڈالر کا سود ادا کیا۔ جو کہ جی ڈی پی کا تقریباً 2 فیصد ہے۔

بانڈ ہولڈرز کو اربوں ڈالر کی اضافی آمدنی۔

وہ لوگ جن کے پاس  سرکاری بانڈز ہوتے ہیں، سود کی زیادہ شرح ادا کر رہے ہیں۔ قرض معیشت میں مدد کرتا ہے کیونکہ آپ اس سے بنیادی ڈھانچے جیسے بڑے اقدامات اٹھا سکتے ہیں۔

وبائی امراض سے پیدا ہونے والے بحرانوں کا مقابلہ کرسکتے ہیں، لیکن آپ کو یہ دیکھنا ہوگا کہ آپ کا قرض  جی ڈی پی کا کتنے فیصد ہے۔ کیونکہ یہ استحکام کا اشارہ ہے۔

قرض کے اچھے استعمال ہیں اور قرض کے برے استعمال بھی ہیں۔

قرض کے اخراجات اور فوائد دونوں میں توازن پیدا کرنے کی ضرورت ہے جو ہم آنے والی نسلوں کو منتقل کرتے ہیں۔

کہا جاتا ہے قومی قرض کسی نہ کسی طرح ہم سب پر بوجھ ہے۔آپ لوگوں کو قومی قرضوں کے بارے میں بات کرتے ہوئے سنیں گے کہ  آنے والی نسلوں پر بوجھ ہے۔

قرض لوگوں کو خوفزدہ کرتا ہے کیونکہ وہ  سوچتے ہیں کہ حکومت کا بجٹ گھریلو بجٹ کی طرح کام کرتا ہے اور اگر حکومت قرض لے رہی ہے تو ایسی صورت پیدا ہو سکتی ہے جب یہ اسکی ادائیگی کرنے کی متحمل نہیں ہو گی۔ 

مگر اصل میں ایسا نہیں نہیں ہے۔

کیونکہ حکومت کا بجٹ گھریلو بجٹ کی طرح کام نہیں کرتا۔

امریکہ واحد ملک نہیں جو مقرض ہے.دنیا کے 15 دیگربڑے ممالک بھی اس فہرست میں شامل ہیں۔جی ڈی پی کے تناسب سے امریکہ سے زیادہ قرض جاپان کا ہے جودنیا میں سب سے زیادہ مقروض ہے۔ ماہر اقتصادیات اسٹیفنی کیلٹن کا کہنا ہے کہ جاپان کی معاشی صورتحال واضح کرتی ہے کہ قرض اتنا نقصان دہ کیوں نہیں ہے جیسا کہ ماہرین اقتصادیات کا خیال ہے۔

جاپانی حکومت گزشتہ تین دہائیوں سے بنیادی طور پر مالیاتی خسارے کو چلا رہی ہے۔ کیا وہاں مہنگائی ہوئی ہے؟ کیا اس نے شرح سود کو بہت زیادہ کر دیا اور نجی سرمایہ کاری میں اضافہ ہوا ہے؟  کیا جاپان کو کسی قسم کے مالی سالوینسی بحران کا سامنا کرنا پڑا ہے اس سب کا جواب نفی میں ہے۔ جو معیشتیں مالیاتی خسارے میں رہتی  ہیں، اس سے قرض بڑھتا رہتا ہے، شرح سود بڑھتی  ہے، اس سے مہنگائی کے مسائل، سالوینسی کا خطرہ ہوتا ہے، مگر جاپان میں ایسا کچھ نہیں ہوا۔ جاپان کو کسی قسم کے ڈیفالٹ یا قرض کا بحران نہیں ہے۔ کیونکہ جاپان بہت کم شرح پر قرض لیتا ہے۔ جاپانی معیشت بہت آہستہ اور بہت سست رفتار سے ترقی کر رہی ہے۔ جاپانی معیشت کتنی تیزی سے ترقی کر چکی ہوتی اگر وہ اتنے زیادہ عوامی قرضوں میں نہ ڈوبے ہوتے۔ اصل میں ڈیفالٹ اس وقت ہوتا ہے جب حکومت ادائیگی نہیں پاتی جس کا اس نے وعدہ کیا تھا۔ ایک تجزیہ کار کا کہنا ہے کہ میرے خیال میں ہم کرہ ارض پر ان دو ممالک میں سے ایک ہیں جن پر قرض کی اس طرح کی حد موجود ہے۔ دوسرا ملک ڈنمارک ہے اور انہوں نے اسے اتنا بلند کر دیا ہے کہ اس کے باوجود یہ ان کے لیے کبھی بھی مسئلہ نہیں بنتا ۔

مگر قرض کی حد سے زیادتی  کے امریکہ پر سنگین نتائج ہو سکتے ہیں۔ عالمی معیشت میں بانڈ کی درجہ بندی کے ادارے فچ نےاگست 2023 کے اوائل میں امریکہ کی کریڈٹ ریٹنگ سرفہرست سے قدرے نیچے کرد ی۔

مالیاتی پالیسی سے زیادہ اور قرض سے جی ڈی پی کے تناسب میں مسلسل اضافہ ہوتا جا رہا ہے اور شرح سود آہستہ آہستہ بلند ہو رہی ہے، جس سے یہ امریکہ کے لیے مشکل ہو رہا ہے۔ ادائیگی کے لئے امریکہ کو اپنے کچھ مایلیاتی اثاے بھی فروحت کرنا پڑ سکتے ہیں۔

لوگ تجریدی سطح پر خسارے کو کم کرنے کے حق میں ہیں۔ مسئلہ نفاذ کی سطح کا ہے، وہ اخراجات میں کمی کی مخالفت کرتے ہیں۔

 

جواب چھوڑیں

Please enter your comment!
Please enter your name here