عالمی کمپنیوں کو پاکستان میں سیٹلائٹ کمیونیکیشن سروسز شروع کرنے کی اجازت 

425

 

نیشنل سپیس پالیسی کے تحت سٹار لنک سمیت بین الاقوامی کمپنیوں کو وزارت دفاع سے این او سی ملنے کے بعد پاکستان میں سیٹلائٹ کمیونیکیشن سروسز شروع کرنے کی اجازت ہے۔

نگراں حکومت نے قومی خلائی پالیسی کی منظوری دے دی ہے جس کے تحت نجی شعبے کی کمپنیوں کو پاکستان میں سیٹلائٹ کمیونیکیشن سروسز کے لیے کم زمین والے مدار میں سیٹلائٹ تعینات کرنے کی اجازت دی گئی ہے۔

توقع ہے کہ اس اقدام سے غیر منظم خلائی شعبے سے منسوب 4 کروڑ ڈالر کے تخمینہ شدہ سالانہ معاشی نقصان کو دور کیا جائے گا، جہاں وسائل کا ایک اہم حصہ استعمال نہیں کیا جا رہا ہے۔

نئی پالیسی کے تحت سٹار لنک سمیت بین الاقوامی کمپنیوں کو وزارت دفاع سے عدم اعتراض کا سرٹیفکیٹ حاصل کرنے کے بعد پاکستان میں سیٹلائٹ کمیونیکیشن سروسز شروع کرنے کی اجازت ہے۔

اس اقدام کو ترغیب دینے کے لیے نجی شعبہ اپنی آمدنی کا 6 فیصد حکومت کے ریسرچ اینڈ ڈیولپمنٹ (R&D) فنڈ میں دے گا۔

نگراں وزیر انفارمیشن ٹیکنالوجی اور ٹیلی کمیونیکیشن عمر سیف نے بتایا کہ سیٹلائٹ کمیونیکیشن سروسز کے لائسنس پاکستان ٹیلی کمیونیکیشن اتھارٹی (پی ٹی اے) دلچسپی رکھنے والی نجی جماعتوں کو جاری کرے گا۔ اس اقدام کا مقصد مواصلاتی خدمات فراہم کرنا ہے، خاص طور پر ایسے دور دراز علاقوں میں جہاں فائبر کیبل نیٹ ورک نہیں ہیں۔

پالیسی فریم ورک اہم سٹیک ہولڈرز بشمول وزارت آئی ٹی، پی ٹی اے، پاکستان الیکٹرانک میڈیا ریگولیٹری اتھارٹی (پیمرا) اور فریکوئنسی ایلوکیشن بورڈ (FAB) کے ساتھ مشاورت کے بعد تیار کیا گیا ہے۔

پالیسی خلائی ٹیکنالوجی سے زیادہ سے زیادہ فوائد حاصل کرنے، شہری اور تجارتی استعمال اور قومی سلامتی پر توجہ مرکوز کرتی ہے۔ پاکستان اسپیس اینڈ اپر ایٹموسفیئر ریسرچ کمیشن (سپرکو) کے دائرہ کار سے متعلق خدشات کو یہ شرط لگا کر دور کیا گیا کہ نجی شعبہ اپنی آمدنی کا ایک فیصد حکومت کے آر اینڈ ڈی فنڈ میں دے گا۔

کابینہ نے پالیسی انتظامات پر اطمینان کا اظہار کرتے ہوئے غوروخوض کے بعد تجویز کی منظوری دی۔

 

جواب چھوڑیں

Please enter your comment!
Please enter your name here